.

برلن میں ایران اور اسرائیل ایک میز پر!

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

ایران اسرائیل کو اپنے بدترین دشمن ملکوں میں شمار کرتا ہے مگر بعض مواقع پر ایران کی صہیونی ریاست کے ساتھ پائی جانے والی قربت کئی سوالات کو بھی جنم دیتی ہے۔

حال ہی میں جرمنی کے دارالحکومت برلن میں ایک سیاحتی نمائش کا اہتمام کیا گیا۔ اس نمائش میں اسرائیلی سیاحتی کمپنیوں کے عہدیداروں کے ساتھ ساتھ ایران کے سیاحتی شعبے کے ذمہ داران نے بھی شرکت کی۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق برلن میں منعقدہ ’ITB‘ ٹورزم نمائش میں ایران اور اسرائیل کے درمیان محبت اور قربت کے فروغ کی بھی کوشش کی گئی۔ اس موقع پر اسرائیلی ٹورزم کمپنی کے چیف ایگزیکٹو اور ایرانی سیاحتی شعبے کی خٰاتون عہدیدار کی ملاقات کرائی گئی۔

اسرائیل کے ’مؤقر‘ عبرانی اخبار ’یدیعوت احرونوت‘ نے اپنی رپورٹ میں بتایا کہ اسرائیلی سیاحتی کمپنی ’ Ananey Communications‘ کے چیئرمین شیرون لامبرگرکو ایک فوٹیج دکھائی گئی جس میں ایران میں اہم سیاحتی مقامات کی نشاندہی کی گئی۔ اس موقع پر لامبرگر کی ایرانی خاتون عہدیدار کے ساتھ ملاقات کرائی گئی۔ اخباری رپورٹ کے مطابق دونوں رہ نماؤں کے ہاں سیاحتی مواقع سے فایدہ اٹھانے کی ضرورت پر زور دیا۔ ان کا کہنا تھا کہ سیاحت کے شعبے میں دونوں ممالک ایک دوسرے کے قریب آ سکتے ہیں۔

شیرون لامبرگرنے ایرانی سیاحتی مندوبہ کے ساتھ ملاقات کی۔ دونوں ملکوں کے درمیان پائے جانے والے اختلافات کے باوجود اسرائیل میں سوشل میڈیا پر اس ملاقات کو اہم پیش رفت قرار دیا۔

اسرائیلی اخبار نے لامبرگر کا ایک بیان بھی نقل کیا ہے جس میں جس میں ان کا کہنا ہے وہ ایران میں سیاحت کی ترغیب سے متعلق مزید مواد کا انتظار ہے۔