.

یمن: عدن ریفائنری میں دھماکے کے بعد آتشزدگی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

یمن میں جمعہ کی شب "عدن ریفائنری" کمپنی میں زور دار دھماکے کے بعد ایک ٹینک میں آگ لگ گئی۔

عدن میں "العربيہ" کے نمائندے ردفان الدبیس کے مطابق تیل کے ایک ٹینک کو فائرنگ کا نشانہ بنایا گیا جس کے بعد غالبا شارٹ سرکٹ ہونے کے نتیجے میں دھماکا ہوا۔ نمائندے نے بتایا کہ دھماکے کی اصل وجوہات کے حوالے سے متضاد معلومات سامنے آئی ہیں اور ریفائنری کے ایک ٹینک میں آگ لگنے کا سبب غیر واضح لگتا ہے۔

ادھر عدن ریفائنری کے ایک ذمے دار نے فرانسیسی خبر رساں ایجنسی سے بات کرتے ہوئے کہا کہ "تیل کے ایک ٹینک میں لگنے والی آگ دھماکے کا نتیجہ ہو سکتی ہے اور غالبا یہ تخریب کار عناصر کی کارروائی ہے"۔

عدن ریفائنری کمپنی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر محمد البکری نے بتایا کہ کمپنی کی فائر فائٹر ٹیم اور شہری دفاع کے اہل کار کمپنی کے ایک ٹینک میں جمعے کی شام سات بجے بھڑکنے والی آگ بجھانے میں کامیاب ہو گئے۔ البکری کے مطابق یہ آگ ایک چھوٹے ٹینک میں لگی جس میں پٹرولیم مصنوعات کی باقیات موجود تھیں ۔۔۔ اس سے قبل ایک زور دار دھماکا سنا گیا جس کی وجہ معلوم نہیں ہو سکی۔ انہوں نے بتایا کہ ٹینک میں لگنے والی آگ کے نتیجے میں دھوئیں کے گہرے بادل اٹھتے دکھائی دیے۔ آگ پر ڈیڑھ گھنٹے کی محنت کے بعد قابو پا لیا گیا۔

یاد رہے کہ عدن ریفائنری کو 2015 کے معرکوں کے دوران نقصان پہنچا تھا۔ ایک برس تک تعطل کا شکار رہنے کے بعد 2016 میں ریفائنری نے دوبارہ کام شروع کیا۔