جی سی سی،وسط ایشیا اجلاس سے اقتصادی اور دوطرفہ تعلقات کو فروغ ملے گا: خالد الفالح

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

سعودی عرب کے وزیربرائے سرمایہ کاری خالد بن عبدالعزیز الفالح نے امید ظاہر کی ہے کہ جدہ میں خلیج تعاون کونسل (جی سی سی) اور وسط ایشیائی ممالک کے سربراہ اجلاس سے دونوں خطوں کے درمیان اقتصادی توسیع، سرمایہ کاری کو فروغ دینے اور باہمی تعلقات کو مضبوط بنانے میں مدد ملے گی۔

جی سی سی کے رکن چھے ممالک اور ازبکستان، ترکمانستان، تاجکستان، کرغزستان اور قزاقستان کے قائدین جدہ میں سربراہ اجلاس میں شرکت کر رہے ہیں۔

سعودی عرب کی سرکاری پریس ایجنسی (ایس پی اے) کے مطابق، خالد الفالح نے وسط ایشیا میں سعودی عرب کی اہم سرمایہ کاری پر روشنی ڈالی اورکہا کہ اب مملکت میں وسط ایشیا کی سرمایہ کاری کے حجم کو بڑھانے اور متنوع بنانے کی کوشش کی جا رہی ہے۔

انھوں نے کہا کہ قابل تجدید توانائی سے لے کر حفظانِ صحت اور شہری ہوا بازی تک، سعودی وزارت سرمایہ کاری نجی اور سرکاری شعبوں کے ساتھ مل کر کام کررہی ہے تاکہ مملکت میں منافع بخش اور محفوظ سرمایہ کاری کے ماحول میں وسط ایشیائی سرمایہ کاروں کے لیے مواقع پیدا کیے جا سکیں۔

خالدالفالح نے کہا کہ سعودی ویژن 2030 کی طرح ، وسط ایشیائی ممالک نے بھی تزویراتی ترقیاتی منصوبوں کو اپنایا ہے ، جیسے کرغزستان کی قومی ترقیاتی حکمتِ عملی 2018-2040 اور قزاقستان 2050 کی حکمتِ عملی ہے۔

سعودی وزیر نے زور دے کر کہا کہ اگرچہ یہ ویژن اور حکمت عملی اپنی اپنی تفصیل میں مختلف ہیں ، لیکن وہ ان میں اقتصادی اور سرمایہ کاری کے اہداف مشترک ہیں۔ان کے مطابق، وسط ایشیائی خطے میں سیاحت، قابل تجدید توانائی اور پن بجلی، زراعت، سیاحت اور صحت کی خدمات جیسے اہم شعبوں میں سرمایہ کاری کے متعدد مواقع موجود ہیں، جن سے سعودی ادارے فائدہ اٹھا سکتے ہیں۔

انھوں نے بتایا کہ سعودی عرب نے وسط ایشیا کے متعدد حصوں میں اہم سرمایہ کاری کی ہے جس میں سعودی توانائی کمپنی اے سی ڈبلیو اے پاور بھی شامل ہے۔ کمپنی اس وقت ازبکستان، آذربائیجان اور قزاقستان میں قابلِ تجدید توانائی کے منصوبوں پر کام کر رہی ہے جیسے شمسی اور ہوا کی توانائی کا استعمال اور توانائی ذخیرہ کرنے والی بیٹریاں بنانا شامل ہیں۔

انھوں نے ازبکستان میں صحت کی دیکھ بھال کے شعبے میں سرمایہ کاری کے لیے ڈاکٹر سلیمان الحبیب میڈیکل گروپ (ایچ ایم جی) کے دستخط کردہ معاہدوں اور مفاہمت کی یادداشتوں (ایم اویوز) ، جمہوریہ قزاقستان میں فوازالخوقیرگروپ کی طرف سے سیاحت کے شعبے میں سرمایہ کاری کے منصوبوں اور ازبکستان میں زرعی شعبے میں الراجحی انٹرنیشنل گروپ کی سرمایہ کاری کے منصوبوں پر بھی روشنی ڈالی۔

ان منصوبوں کے علاوہ، وزیر نے سعودی عرب کی فضائی کمپنی فلائی ناس کی جانب سے سعودی عرب اور بعض وسط ایشیائی جمہوریاؤں کے درمیان خدمات شروع کرنے کی کوششوں پر بھی روشنی ڈالی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں