بحرمتوسط کے آبی راستے بند کردیں گے ، غزہ میں تباہی کے جواب میں ایرانی دھمکی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

ایرانی پاسداران انقلاب کے کمانڈر نے دھمکی دی ہے کہ امریکہ اور اس کے اتحادیوں نے غزہ میں جرائم بند نہ کیے تو بحر متوسط سے آمد و رفت اور نقل و حمل کو روک دیا جائے گا۔ یہ بات ایرانی ذرائع ابلاغ نے ہفتے کے روز رپورٹ کی ہے تاہم یہ نہیں بتایا گیا کہ ایرانی پاسداران انقلاب بحر متوسط کے راستے بند کرنے کے لیے کیا راستہ اختیار کریں گے۔ فلسطینی مزاحمتی گروپ نے بھی امریکہ پر الزام لگا رکھا ہے کہ اسرائیل کی کھلی حمایت کرکے اور اسرائیل کو اسلحہ فراہم کرنے کے بعد امریکہ بھی اسرائیل کے غزہ میں جنگی جرائم میں برابر کا شریک ہے۔

واضح رہے غزہ میں 7 اکتوبر سے اب تک 8 ہزار سے زائد فلسطینی بچے اور ساڑھے 6 ہزار سے زائد عورتوں سمیت 20 ہزار سے زائد فلسطینی شہید ہوچکے ہیں جبکہ 19 لاکھ سے زائد فلسطینی بے گھر ہیں۔

اس تناظر میں ایرانی پاسداران انقلاب نے ہفتے کے روز دھمکی دی ہے کہ جلد ہی بحر متوسط کو بند کردیا جائے گا۔ ایرانی خبر رساں ادارے تسنیم کے مطابق یہ بات پاسداران انقلاب کے بریگیڈئیر جنرل محمد رضا ناقدی کی طرف سے کہی گئی ہے۔

ایرانی حمایت یافتہ یمنی حوثی پچھلے ماہ میں تجارتی جہازوں کو کئی بار بحیرہ احمر میں نشانہ بنا چکے ہیں اور یہ اعلان کرچکے ہیں کہ جب تک غزہ میں فلسطینیوں کو امدادی سامان پہنچنے میں رکاوٹیں ہیں اسرائیل کی طرف بھی کسی بھی جہاز کو جانے کی اجازت نہیں دیں گے۔

اس کے باوجود کہ ایران کی بحر متوسط میں کوئی براہ راست رسائی نہیں ہے پاسداران انقلاب کے کمانڈر کا یہ دھمکی آمیز بیان غیر معمولی ہے۔ جبکہ ایرانی حمایت یافتہ حوثی اس سے پہلے ہی ہر طرح کی نقل و حرکت کو نشانہ بنا رہے ہیں اور اپنے راکٹ حملوں کی وجہ سے چیلنج بنتے جارہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں