مشرق وسطیٰ

نیتن یاہو اندرونی مشکلات کی وجہ سے جنگ کو طول دینے پر مجبور: رپورٹ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

امریکی حکام کو لگتا ہے کہ وہ اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو کے ساتھ نمٹنے میں حقیقی پریشانی کا شکار ہیں، جو کہ اندرونی طور پر دباؤ کا سامنا کر رہے ہیں۔ اسرائیل کے مفادات کی تلاش میں ہیں، لیکن ان کے ساتھ نمٹنے سے کوئی فرار نہیں ہے۔

اس امر کا اظہار "پولیٹیکو" ویب سائٹ کی طرف سے شائع کردہ ایک رپورٹ میں کیا گیا ہے۔ رپورٹ کے مطابق اسرائیل اور حماس کے درمیان جنگ کو روکنے کی ان کی کوششوں کی وجہ سے نیتن یاھو کو مشکلات کا سامنا ہے۔

سائٹ کے مطابق اسرائیلی رہ نما اپنے عہدے پر رہنے اور بدعنوانی کے الزام میں جیل سے بچنے کی کوشش کر رہے ہیں۔ دو متعلقہ خواہشات نے انہیں طویل عرصے سے اپنے حکمران اتحاد کے انتہائی دائیں بازو کے ارکان کے مطالبات کے سامنے سر تسلیم خم کر دیا ہے۔ پولیٹیکو کے مطابق اب عدلیہ میں اصلاحات کی ان کی کوششوں کے خلاف اسرائیلی سپریم کورٹ کا فیصلہ انہیں اور بھی کمزور کر سکتا ہے۔

انتہائی دائیں بازو کی شخصیات میں خاص طور پر وزراء بزلئیل سموٹریچ اور ایتمار بن گویر "گہرے فلسطینی مخالف خیالات" رکھتے ہیں اور امریکی تجاویز کی مخالفت کرتے ہیں جنہیں وہ "فلسطینیوں کے لیے بہت دوستانہ" سمجھتے ہیں۔ اگر وہ نیتن یاہو کے اتحاد کو ترک کر دیتے ہیں تو وہ وزارت عظمیٰ سے محروم ہو سکتے ہیں۔

اس سے انہیں درپیش قانونی خطرات بڑھ سکتے ہیں۔ نتیجتاً اس صورت حال نے نیتن یاہو کو جنگ کے بارے میں امریکی مشورے پر عمل کرنے سے گریز پر مجبور کیا۔ یہ اس بات کا اشارہ ہے کہ غزہ کی پٹی پر اسرائیلی بمباری سے بچنے کے لیے فلسطینیوں کی جدوجہد کے دوران امریکا۔اسرائیل تناؤ بڑھے گا۔

اسرائیلی بمباری میں شہید ہونے والے کی تعداد روز بروز بڑھ رہی ہے
اسرائیلی بمباری میں شہید ہونے والے کی تعداد روز بروز بڑھ رہی ہے

اس تناظر میں امریکی-اسرائیلی بات چیت سے واقف ایک امریکی اہلکار نے کہا کہ "یہ ہمیشہ واضح نہیں ہوتا ہے کہ اسرائیل میں معاملات کون چلا رہا ہے۔ ایسے اوقات تھے جب کہ نیتن یاہو ہمیں اشارہ کرتے ہوئے کہتے ہیں میرے ہاتھ بندھے ہوئے ہیں۔ جیسا کہ آپ جانتے ہیں اور میرا یہ اتحاد ہے۔ یہ "سیاسی ضروریات ہیں جن کا مجھے سامنا ہے۔"

مشرق وسطیٰ کے ایک سابق مذاکرات کار ہارون ڈیوڈ ملر نے نیتن یاہو کو تیزی سے مایوس کن ہوتا لیڈر قرار دیا۔ انہوں نے کہا کہ یہ وہ شخص ہے جس نے ہمیشہ خود کو ایک مشکل خطے میں سلامتی کے حصول کے لیے اسرائیل کی بہترین امید کے طور پر پیش کیا۔ ایک ایسی تصویر جسے شدید نقصان پہنچا۔ انہوں نے مزید کہا کہ "یہ ایک ایسے رہنما کی ایک خوفناک مثال ہے جس نے اپنی سیاسی بقا کو اس ملک کے بہترین مفادات کے ساتھ ملا دیا ہے۔ یہ ایک خوفناک امتزاج ہے اور خوفناک فیصلہ سازی کی طرف لے جاتا ہے۔"

نیتن یاہو کو اسرائیل کے سب سے طویل عرصے تک رہنے والا وزارت عظمی کے منصب پر برقرار وزیر اعظم تصور کیا جاتا ہے، وہ تقریباً 16سال تک وقفے وقفے سے اس عہدے پر فائز رہے۔ کچھ تجزیہ کاروں اور امریکی حکام نے کہا ہے کہ اب ان کے اقتدار میں رہنے کے امکانات زیادہ ہو سکتے ہیں۔ جنگ جتنی طویل ہوگی ان کے اقتدار میں رہنے کا موقع اتنا ہی طویل ہو گا‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں