شوہرکو بیوی کی آنکھیں پسند نہ آئیں، رات کو شادی صبح طلاق دے دی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

مصر میں اکثر طلاق کے واقعات کی خبریں سامنے آتی رہتی ہیں۔ قاہرہ ہی سے نئی نویلی دلہن کی طلاق کا واقعہ سامنے آیا ہے تاہم اس کا سبب عجیب وغریب ہے۔ شوہر نے بیوی کی آنکھوں کی رنگت کی وجہ سے اسے شادی کی صبح طلاق دے کر گھر بھیج دیا اور اہل خانہ کی طرف سے مسئلے کے حل کی کوششیں بھی ناکام رہیں۔

مصر کی فیملی کورٹ کے سامنے خاتون کی وکیل نھیٰ الجندی نے’العربیہ ڈاٹ نیٹ‘ کو بتایا کہ دلہن جو فیکلٹی آف لاء کے چوتھے سال کی طالبہ ہے۔ وہ شادی کی اگلی صبح دولہے کے جھگڑے سے حیران رہ گئی۔لڑکی نے رات کو سونے سےقبل کانٹیکٹ لینس اتار دیے تھےجس کے بعد شوہر کو اندازہ ہوا کہ اس کی آنکھیں سبز ہیں۔

لڑکی پر دھوکہ دہی کا الزام

شوہر اپنے آپ پر قابو نہ رکھ سکا اور شادی میں دلہن کی خوشی کو خاطر میں نہ لاتے ہوئے دلہن پر دھوکہ دینے کا الزام لگا کر اسے طلاق دے دی۔

دلہن نے اپنے دولہے کو یہ سمجھانے کی کوشش کی کہ وہ بینائی کی خرابی کی وجہ سے ہمیشہ کانٹیکٹ لینز پہنتی ہے اور اسے صرف سوتے وقت اتارتی ہے۔ اس نے کہا کہ اس نے منگنی کے دوران اس کی آنکھوں کے رنگ کے بارے میں نہیں پوچھا۔

والدین کی تنازعہ حل کرنے کی ناکام کوشش

خاندان نے اس مسئلے کو حل کرنے کے لیے مداخلت کی، لیکن شوہر نے اصرار کیا کہ وہ "نسل کو بہتر بنانے" کے لیے "آنکھوں کے رنگ" کی شرط پر قائم رہے۔

طلاق دینے والے شخص کا کہنا ہے کہ چونکہ بیوی کی آنکھیں سبز ہیں اور اس سے ہونے والی اولاد اور نسل بھی ایسی ہی ہوگی۔ اس لیے وہ ایسی عورت سے اپنی نسل آگے نہیں بڑھا سکتا۔ اس سے اس کی نسل متاثر ہوگی۔

دلہن کے گھر والوں نے شوہر کو معاملہ سمجھانے کی کوشش کی اور کہا کہ اگر دلہن کی آنکھیں سبز ہوں تو بھی اس سے اس بات کا ثبوت نہیں ملتا کہ اس کے بچے بھی اسی خصوصیت کے حامل ہوں گے۔ وہ اس کے جین بھی لے سکتے ہیں، لیکن اس نے واضح طور پر پیچھے ہٹنے سے انکار کردیا اور طلاق دی۔

فیملی کورٹ نے دلہن کے حق میں فیصلہ سناتے ہوئے طلاق کو رجسٹرڈ کرنےسے انکار کر دیا۔ اس نے اسے سرکاری طور پر طلاق دینے اور اسے اس کے قانونی حقوق دینے سے انکار کر دیا تھا۔ عدالت کا کہنا ہے شوہر کو خاتون کے تمام حقوق ادا کرنا ہوں گے۔

وکیل نھیٰ الجندی نے کہا کہ طلاق کے فیصلے کے بعد ازدواجی منقولہ کے ضائع ہونے کا مسئلہ ابھی باقی ہے کیونکہ شوہر اب تک اپنی بیوی کو اس کے قانونی حقوق اور ازدواجی منقولہ حقوق دینے سے انکاری ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں