حزب اللہ کا شام، لبنان سرحد پر واقع تزویراتی اہمیت کی حامل وادی پر قبضہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

لبنان کی شیعہ ملیشیا حزب اللہ نے شام کی سرحد کے ساتھ واقع تزویراتی اہمیت کی حامل ایک وادی پر قبضے اور وہاں سے النصرہ محاذ کے جنگجوؤں کو نکال باہر کرنے کا دعویٰ کیا ہے۔

حزب اللہ نے سوموار کے روز ایک بیان میں کہا ہے کہ اس نے جرود عرسال میں واقع وادی الخیل کی جانب مختلف اطراف سے پیش قدمی کی ہے۔جرود عرسال لبنان کا ایک بنجر پہاڑی سرحدی علاقہ ہے اور یہاں القاعدہ سے وابستہ النصرہ محاذ اور داعش کے جنگجوؤں نے اپنے ٹھکانے بنا رکھے تھے۔

حزب اللہ کے ملٹری میڈیا یونٹ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ اس پیش قدمی کے بعد ان کے گروپ کو علاقے میں النصرہ محاذ کے سب سے اہم ٹھکانے پر کنٹرول حاصل ہوگیا ہے۔حزب اللہ اور شامی فوج نے گذشتہ جمعے کے روز اس علاقے میں النصرہ محاذ کے جنگجوؤں کے خلاف کارروائی شروع کی تھی اور انھوں نے بڑی تیزی سے پیش قدمی کی ہے۔

مقامی میڈیا نے یہ اطلاع دی ہے کہ اب علاقے میں داعش کے خلاف کارروائی کی جائے گی۔شام کی سرکاری خبررساں ایجنسی سانا نے کے مطابق شامی فوج اور حزب اللہ نے شام کے سرحدی علاقے میں واقع قصبے فلیطہ پر بھی دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا ہے۔

سکیورٹی ذرائع کے مطابق اس لڑائی میں حزب اللہ کے انیس جنگجو ہلاک ہوگئے ہیں جبکہ ایک سو تیس سنی جنگجو مارے گئے ہیں۔واضح رہے کہ شام میں گذشتہ چھے سال سے جاری خانہ جنگی میں حزب اللہ نے سنی جنگجو گروپوں کے خلاف کارروائی میں اہم کردار ادا کیا ہے۔اس کی کمک کی بدولت ہی شامی فوج کو میدان جنگ میں کامیابیاں ملی ہیں اور اس نے باغیوں کے زیر قبضہ بہت سے شہر اور قصبے واپس لے لیے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں