.

اسرائیل کا لبنانی حزب اللہ کی سرحد پردراندازی کی کوشش ناکام بنانے کا دعویٰ

حزب اللہ کی طرف سے اسرائیلی دعوے کی تردید

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اسرائیلی وزیراعظم بنیامین نیتن یاہو نے لبنانی شیعہ ملیشیا حزب اللہ کی سرحدی دراندازی کی کوشش ناکام بنانے کا دعویٰ کیا ہے۔

ایک بیان میں اسرائیلی وزیراعظم نے کہا ہے کہ حزب اللہ آگ سے کھیل رہی ہے جبکہ ایران کی حمایت یافتہ حزب اللہ نے اسرائیلی فوج کے ساتھ کسی تصادم کی تردید کی ہے۔

نیتن یاھو نے ایک پریس کانفرنس میں کہا ہے کہ لبنانی علاقوں سے ہونے والے کسی بھی حملے کے لیے حزب اللہ اور لبنانی حکومت ذمہ دار ہے۔ انہوں‌نے خبردار کیا کہ حزب اللہ اسرائیل کی سرحد پر چھیڑ چھاڑ کرکے آگ سے کھیل رہی ہے۔ اس پر ہمارا ردعمل بہت سخت ہوگا۔

لبنان - اسرائیل سرحد سے العربیہ کے نمائندے نے اطلاع دی ہے کہ شعبا فارمز کے سرحدی علاقے میں حزب اللہ اور اسرائیل کے درمیان کل سوموار کے روز جھڑپ ہوئی ہے۔ اسرائیلی میڈیا نے اطلاع دی ہے کہ حزب اللہ کا ایک گروپ سرحدی دراندازی کی کوشش کے دوران اسرائیلی فوج کی فائرنگ سے زخمی ہوا ہے اور ایک گروپ واپس چلا گیا۔

دوسری طرف حزب اللہ نے اسرائیلی فوج کے ساتھ سرحد پر کسی قسم کی جھڑپ کی تردید کی ہے۔ حزب اللہ کا کہنا ہے کہ اسرائیلی فوج کی طرف سے لبنان کی سرحد پر فائرنگ کی گئی تھی تاہم اس موقع پر کوئی جھڑپ نہیں ہوئی۔

اسرائیل نے حزب اللہ کے انکار پر یہ کہتے ہوئے جواب دیا کہ ہمارے پاس شعبا فارمز میں ہونے والے تصادم کے دستاویزی ثبوت موجود ہیں۔

اس سے قبل اسرائیلی فوج نے اعلان کیا تھا کہ لبنان کی سرحد پر حزب اللہ سے جھڑپ کے بعد حالات معمول پر آ رہےہیں۔ بیان میں کہا گیا ہے کہ لبنان کے ساتھ سرحدی علاقے کے لوگوں سے کہا گیا ہے کہ وہ کسی قسم کی پریشانی کا مظاہرہ نہ کریں۔

قابض اسرائیلی فوج کے ترجمان ایوچائی ادرای نے ایک بیان میں کہا کہ فوج نے جبل راس کے علاقے میں تخریب کاری کی کارروائی کو ناکام بنا دیا۔ فوج نے حزب اللہ کے 3 سے 4 دہشت گردوں پر مشتمل سیل کے منصوبہ بند آپریشن کو ناکام بنا دیا۔ انہوں‌ نے کہا کہ حزب اللہ کے جنگجوؤں‌ نے بلیو لائن کی خلاف ورزی کی اور اسرائیل کی خود مختاری والے علاقے میں داخل ہوئے۔

ادرای نے مزید کہا کہ فوج نے حزب اللہ جنگجوؤں‌ پر فائرنگ کی اور ان کا منصوبہ ناکام بنا دیا۔ اس آپریشن میں‌اسرائیلی فوج کا کوئی جانی نقصان نہیں ہوا۔