.

لبنانی ایوان صدر نے صدر جمہوریہ کی صحت بارے افواہیں مسترد کردیں

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

جمہوریہ لبنان کے ایوان صدر کے میڈیا آفس نے صدر میشل عون کی صحت کی خرابی سے متعلق افواہوں کی سختی سے تردید کی ہے۔

دفتر نے ایک بیان میں کہا ہے کہ صدر عون اپنے معمول کے فرائض بعبدا پیلس میں سرانجام دے رہے ہیں اور وہ مکمل طور پر تندرست ہیں۔

"ٹوئٹر" پر لبنانی ایوان صدر کے سرکاری اکاؤنٹ میں کہا گیا ہے کہ ایوان صدر کا میڈیا آفس جمہوریہ کے صدر جنرل میشل عون کی صحت کی حیثیت کے بارے میں من گھڑت خبروں کی واضح طور پر تردید کرتا ہے۔

اس کے علاوہ نگراں وزیراعظم حسن دیاب نے صدر عون کی طرف سےملک میں پائے جانے والے ایندھن بحران پر تبادلہ خیال کے لیے اجلاس منعقد کرنے کی تجویز مسترد کر دی ہے۔

جمہوریہ کے ایوان صدر کے میڈیا آفس کی طرف سے شائع ہونے والے ایک بیان کے مطابق صدر عون نے اجلاس کو ایندھن کے بحران کی وجوہات کے سنگین اثرات سے نمٹنے کے لیے وقف کرنے کا مطالبہ کیا۔

لبنانی فوج کے کمانڈر نے ملک میں باقی سکیورٹی سروسز کے رہ نماؤں سے ملاقات کی تاکہ ملک میں ایندھن کے بحران کے اثرات پر تبادلہ خیال کیا جا سکے۔

لبنانی حزب اللہ کے ڈپٹی سیکرٹری جنرل نعیم قاسم نے کہا کہ جماعت ایران سے ایندھن درآمد کرنے کے لیے کام کرے گی۔ یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب لبنان کئی ہفتوں سے ایندھن کی بڑی قلت کا شکار ہے۔

لبنان میں ایندھن کا بحران دن بہ دن بگڑتا جا رہا ہے اور اس بحران کے صحت اور سلامتی کی صورت حال پر خطرناک اثرات کی وارننگ دی گئی ہے۔

اس تناظر میں لبنان میں پرائیویٹ اسپتالوں کے سنڈیکیٹ کے سربراہ سلیمان ہارون نے کل جمعہ کو بتایا کہ 4 اسپتالوں میں دو دن کے اندر ایندھن ختم ہو جائے گا۔

اسپتال سنڈیکیٹ نے خبردار کیا کہ ایندھن کی کمی صحت کے شعبے کے لیے تباہی کا باعث بنے گی لیکن کوئی جواب نہیں دے رہا۔

جمعہ کو وزارت توانائی اور پانی کی جانب سے قیمتوں کے سرکاری اعلان کے انتظار میں بیشتر گیس اسٹیشنوں نے اپنے دروازے بند کر دیے جبکہ چند گیس سٹیشنوں نے جو کام جاری رکھے ہوئے ہیں پرسینکڑوں کاریں کئی کلومیٹر تک کھڑی دیکھی جاسکتی ہیں۔