.

سورج کی سطح پر پُراسرار داغ دھبے، سائنس کیا کہتی ہے؟

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

اتوار کی صبح سورج کی سطح پرچار مختلف مقامات پر ایک ہی وقت میں مختلف سیاہ دھبے دکھائی دیے۔ یہ دھبے سعودی عرب میں بھی نمایاں طورپر نظرآئے۔ جولائی کے بعد یہ اس نوعیت کا دوسرا فلکیاتی مظہر ہے۔

اس سلسلے میں جدہ میں فلکیاتی سوسائٹی کے صدر انجینیر ماجد ابو زاہرہ نے کہا کہ سورج کے دھبوں کا اچانک ظہورپچیسویں نئے شمسی چکرکی طاقت کی علامت اورانتہائی گہری کم سے کم حالت سے پچھلے چکر میں باہر نکلنا ہے۔ ایسا لگتا ہے کہ یہ شمسی چکر شیڈول سے آگے جا رہا ہے۔ جیسا کہ توقع تھی کہ یہ 2025 میں عروج پر پہنچ جائے گا۔سابقہ سائنسی نظریات بھی اسی کی تائید کرتے ہیں مگر شمسی چکر کی زیادہ سے زیادہ سرگرمی ایک سال پہلے بھی ہو سکتی ہے۔

انہوں نے مزید کہا کہ نیا شمسی چکر 2020 کے دوسرے نصف حصے میں شروع ہوا۔ پچھلے مہینوں میں یہ دیکھا گیا ہے کہ سورج پر سرگرمیوں میں مسلسل اضافہ ہوا ہے۔ ایک خیال ہے کہ یہ گذشتہ چارچکروں کے دوران دیکھی جانے والی شمسی سرگرمی کی کمزوری کو توڑ دے گا اور اگر موجودہ رجحانات جاری رہے تو یہ 2024 میں عروج پر پہنچ سکتا ہے۔

سن سپاٹ مانیٹرنگ

ابو زہرا نے کہا کہ اس سال 2021 کے بقیہ حصے میں اور اگلے سال 2022 کے دوران سورج کی جگہوں کی تعداد میں بتدریج اضافہ کرنا شروع ہو جائے گا پھر یہ معلوم ہو جائے گا کہ سولرسائیکل 25 پیش گوئیوں کے مطابق ہے یا مختلف ہے۔ شمسی سائیکل اب بھی ایک ابھرتی ہوئی سائنس ہے اور اس کے حوالے سے اب بھی بہت سی غیر یقینی صورتحال ہے۔

انہوں نے مزید کہا شمسی سائیکل کی سرگرمی کی پیش گوئی کرنے سے خلائی موسم کے طوفانوں کی تکرار کا اندازہ ہوتا ہے۔ ریڈیو میں خلل سے لے کر جغرافیائی طوفان اور شمسی تابکاری کے طوفان تک یہ پیش گوئیاں کئی اطراف سے استعمال ہوتی ہیں اور ان سے آنے والے سالوں میں خلائی موسم کے ممکنہ اثرات کا تعین کیا جاتا ہے۔