اسرائیل سے رہائی کے معاہدے کے بعد فلسطینی قیدی نے بھوک ہڑتال ختم کردی

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی جیل میں اپنی غیرمنصفانہ حراست کے خلاف طویل بھوک ہڑتال کرنے والے فلسطینی قیدی خلیل عواودہ نے اپنا احتجاج ختم کردیا ہے۔انھوں نے آیندہ اکتوبر میں اسرائیل کی جانب سے رہائی پررضامندی ظاہر کرنے کے بعد بدھ کو160 دن سے زیادہ عرصے سے جاری بھوک ہڑتال ختم کردی ہے۔

40 سالہ عواودہ کو دسمبر 2021 میں اسرائیلی سکیورٹی فورسز نے بلاجوازگرفتارکیا تھا لیکن انھوں نے بغیرکسی الزام یا مقدمے کے اپنی گرفتاری کے خلاف بھوک ہڑتال شروع کردی تھی۔اسرائیلی حکام فلسطینیون کی ایسی پکڑدھکڑ کو انتظامی حراست کا نام دیتے ہیں۔

ان کے وکیل احلام حداد نے رائٹرز کو بتایا کہ عواودہ کی 2 اکتوبرکورہائی ہوگی اور وہ اس وقت تک اسپتال میں زیرِعلاج رہیں گے۔

حداد نے بتایا کہ عواودہ نے گذشتہ کئی مہینوں سے صرف پانی پرگزارہ کیا ہے اور پچھلے ہفتے خبردار کیا تھا کہ وہ اپنی بگڑتی ہوئی صحت کی وجہ سے ’’کسی بھی لمحے اپنی جان سے ہاتھ دھو سکتے ہیں‘‘۔

واضح رہے کہ مصری ثالثوں نے حال ہی میں اسرائیل اور فلسطینی گروپ جہادِاسلامی کے درمیان غزہ میں تین روزہ لڑائی کے خاتمے کے لیے طے شدہ جنگ بندی معاہدے کے تحت عواودہ کی رہائی پر زور دیا تھا۔اس لڑائی میں اسرائیلی فوج کے غزہ پر حملوں میں 49 فلسطینی شہید ہو گئے تھے۔

اسرائیلی فوج، وزارت دفاع یا جیل سروس نے فوری طور پربھوک ہڑتالی فلسطینی قیدی کی رہائی پر کوئی تبصرہ کیا ہے اور نہ کوئی بیان جاری کیا ہے۔

جہادِاسلامی کے ترجمان داؤد شہاب نے اس معاہدے کو ایک کامیابی قرار دیا ہے۔اس کے بارے میں انھوں نے کہا کہ یہ کئی ہفتوں کی کوششوں کے بعد سامنے آیا ہے۔

شہاب نے برطانوی خبررساں ایجنسی رائٹرزکو بتایا کہ مصر نے بھائی عواودہ کی آزادی کے لیے بڑی کوشش کی ہے،اس پر ہم اس کے شکرگزار ہیں۔

سوشل میڈیا پر گردش کرنے والی ایک ویڈیو میں عواودہ انتہائی لاغر دکھائی دے رہے ہیں اور ہڈیوں کاڈھانچانظرآرہے ہیں۔اسپتال کے بستر سے بات کرتے ہوئے ان کی سانسیں بار بار ٹوٹ جاتی تھیں۔انھوں نے کہا کہ وہ اس وقت تک اسپتال میں داخل رہیں گے جب تک وہ اپنی صحت دوبارہ حاصل نہیں کرلیتے اور دوبارہ چلنے پھرنے کے قابل نہیں ہوجاتے۔

ان کے وکیل کی جانب سے شیئر کی گئی ایک اور ویڈیو میں عواودہ نے ان لوگوں کا شکریہ ادا کیا جو چائے کے کپ سے بھوک ہڑتال ختم کرنے سے پہلے ان کے ساتھ کھڑے تھے۔انھوں نے کہا کہ ’’آپ کی حمایت پرمیں آپ کا شکرگزارہوں۔آپ ایک عظیم قوم ہیں،آپ ایک عظیم قوم ہیں‘‘۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں