فلسطین اسرائیل تنازع

غزہ میں امدادی سرگرمیاں تیز کی جائیں۔ برطانیہ اور آئرلینڈ کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

برطانیہ اور آئرلینڈ کے وزرا نے غزہ کے لیے امداد فراہمی میں تیزی لانے کی اپیل کی ہے۔ اسرائیلی فوج کے لیے اہم ترین ہدف بن چکے 'الشفاء ہسپتال' میں فوجی کارروائی مکمل ہونے کے بعد یورپی ممالک کے وفود کی اہم ٹیمیں غزہ کے تباہ حال فلسطینیوں کی مدد کے ایک ' فالو اپ ' کے طور پر تیزی سے دورے کرنے لگی ہیں۔ تاکہ اپنی موجودگی میں امداد تقسیم کر سکیں۔

واضح رہے 24 لاکھ آبادی کے حامل غزہ میں اوپر سے اسرائیلی فوج نے بمباری کے علاوہ زمین سے سخت فوجی ناکہ بندی کر رکھی ہے۔ البتہ 21 اکتوبر سے اس ناکہ بندی کو جاری رکھتے ہوئے اسرائیلی فوج نے انتہائی محدود امدادی سامان کی غزہ کے لیے ترسیل کی اجازت دی تھی۔ جو کسی بھی طرح کافی نہ تھی۔

برطانوی وزیر اینڈریو مچل نے اس محدود تر امدادی سلسلے کو دیکھتے ہوئے کہا ' ضرورت ہے امداد کی رفتار ڈرامائی حد تک بڑھائی جائے، ہماری یہ بھی ضرورت ہے کہ اس امر کو یقینی بنائیں کہ اہم ضروریات کی فراہمی کے بہاو کے بہتر کریں۔ تاکہ اشیائے ضرورت ان لوگوں تک پہنچ سکیں جو اس کے ضرورت مند ہیں۔' اینڈریو مچل برطانیہ کے وزیر مملکت برائے افریقی ترقی ہیں۔ ان کہنا تھا ' اس وقت غزہ میں ایندھن کی ترجیحی ضرورت ہے۔'

دوسری جانب اسرائیل نے غزہ کے تباہ لوگوں بشمول ہسپتالوں کو ایندھن کی فراہمی سے مسلسل انکار کر رکھا ہے۔ غزہ میں ایندھن فراہم کیا گیا تو یہ حماس کے استعمال میں چلا جائے گا۔ اس صورت حال میں غزہ کے ہسپتالوں میں داخل زخمی اور مریض سب سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں۔

ہسپتال کے 'انکیوبیوٹرز' میں کئی نومولود بچوں سمیت بہت ساری اموات ایندھن نہ ہونے سے آکسیجن کی فراہمی اور وینٹی لیٹرز بند ہوجانے کے باعث ہوئی ہیں۔

آئرش وزیر مچل مارٹن نے رپورٹرز کے سوالوں کے جواب دیتے ہوئے کہا ' کسی بھی سوال کے بغیر ہم غزہ کے لیے ایندھن کی فراہمی میں ڈرامائی اضافہ چاہتے ہیں۔ غزہ میں انسانی تباہی ہمارے سامنے ہونے جارہی ہے۔ ان کا کہنا تھا ' ہمیں غزہ کے لوگوں کے لیے محفوظ ایریاز بنانے ہوں گے۔ یہ ان کمزور لوگوں کو جمع کیے بغیر اور انہیں مشکل میں ڈالے بغیر۔

یاد رہے برطانیہ نے 51 ٹن کا امدادی سامان غزہ کے لیے پیش کیا ہے۔ یہ ان بھاری آلات کے علاوہ ہے جو مشینری کی صورت فراہم کیے گئے ہیں۔ تاہم برطانیہ غزہ میں جنگ بندی کی مخالفت کرتا ہے جبکہ آئرلینڈ نے جنگ بندی کا مطالبہ کیا ہے۔ آئر لینڈ غزہ میں موجود یرغمالیوں کی رہائی کا بھی مطالبہ کرتا ہے اور غزہ میں ایک ہسپتال کی بمباری سے ہونے والی مکمل تباہی کو بھی یاد میں رکھے ہوئے ہے۔ مچل مارٹن نے یرغمالیوں کی فوری رہائی کا بھی مطالبہ کیا ۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں