یمن میں حوثیوں کے ٹھکانوں پر تین کامیاب حملے کیے ہیں: امریکا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

امریکہ کی قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے کہا ہے کہ ان کے ملک نے حوثیوں کی تین میزائل سائٹس کو کامیابی سے نشانہ بنایا۔

کربی کا کہنا تھا کہ حوثیوں کے پاس اب بھی کچھ جارحانہ صلاحیتیں ہیں۔

امریکی سینٹرل کمانڈ نے جمعے کو کہا کہ اس کی افواج نے حوثیوں کے تین اینٹی شپ میزائلوں پر بمباری کی جن کا رخ جنوبی بحیرہ احمر کی طرف تھا اور لانچ کرنے کے لیے تیار تھے۔

انہوں نے ایکس پلیٹ فارم پر شائع ہونے والے ایک بیان میں کہا ہے کہ فورسز نے یمن میں حوثیوں کے زیر کنٹرول علاقوں میں میزائلوں کا پتہ لگایا اور معلوم کیا کہ وہ تجارتی بحری جہازوں اور امریکی بحریہ کے جہازوں کے لیے ایک انتہائی خطرے کی نمائندگی کرتے ہیں۔

سینٹرل کمانڈ نے تصدیق کی کہ اس نے تینوں میزائلوں کو "اپنے دفاع میں" تباہ کر دیا۔

یہ پیش رفت حوثی میڈیا کے اعلان کے بعد سامنے آیا ہے جس میں امریکا اور برطانیہ نے مغربی یمن کے شہر الحدیدہ میں الجبانہ کے علاقے پر دو فضائی حملے کیے ہیں۔

یورپی فلیٹ مشن

دریں اثنا العربیہ کے نامہ نگار نے اطلاع دی ہے کہ منصوبہ بند یورپی بحری بیڑے کا مشن تجارتی بحری جہازوں کے ساتھ آبنائے باب المندب اور خلیج عدن میں جانا ہے۔ یورپی بحری بیڑے کو ضرورت پڑنے پر طاقت کے استعمال کے قوانین سے لیس کیا جائے گا۔

حوثیوں کی دھمکی

اس سے قبل آج حوثی رہ نما علی القحوم نے بحیرہ احمر میں بحری جہازوں پر گروپ کی جانب سے کیے گئے حملوں کے حوالے سے کہا تھا کہ بحیرہ احمر میں بحری جہاز اور فوج کی موجودگی ہدف کے دائرے میں ہوگی۔

القحوم نے مزید کہا کہ "اگر امریکا، برطانیہ اور اسرائیل اپنے حملوں کو بڑھاتے ہیں تو بدلے میں حوثیوں کی کارروائیوں میں توسیع ہوگی، اور ان کے مفادات کو براہ راست نشانہ بنایا جائے گا"۔

جمعرات کو حوثی گروپ کے فوجی ترجمان نے اعلان کیا کہ خلیج عدن میں ایک امریکی جہاز کو بحری میزائلوں سے نشانہ بنایا گیا اوراسے براہ راست نشانہ بنایا گیا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں