ریستوران اور گروسری اسٹور کے بعد "7 اکتوبر" اردنی نصاب میں شامل

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

اردن میں ایک ریسٹورنٹ کا نام "7 اکتوبر" رکھنے کی وجہ سے پیدا ہونے والے زبردست تنازعہ کے بعد سوشل میڈیا پر سرگرم کارکنوں نے اسکول کی نصابی ایک کتاب سے ایک تصویرشائع کی ہے جس میں بالواسطہ طور پر 7 اکتوبر کے واقعات کی طرف اشارہ کیا گیا ہے۔

اردن کی وزارت تعلیم سے وابستہ نیشنل سینٹر فار کریکولم ڈویلپمنٹ نے دسویں جماعت کے لیے "سول نیشنل ایجوکیشن" کتاب کے نئے ایڈیشن کا انکشاف کیا، جہاں اردنی اسکول کی کتاب کے ایک پیراگراف میں اردن کے ارد گرد اسرائیلی بستیوں پر حملے کے بارے میں بتایا گیا ہے۔ 7 اکتوبر 2023 کو غزہ کی پٹی سے حماس نے اطراف کی بستیوں اور فوجی اڈوں پر حملہ کرکے سیکڑوں افراد کو ہلاک اور اڑھائی سو کو یرغمال بنا لیا تھا۔

سرکاری وضاحت

دوسری جانب اردنی نیشنل سینٹر فار کریکولم ڈویلپمنٹ کے رکن ڈاکٹر ابراہیم بدران نے کہا کہ 7 اکتوبر 2023 کے واقعات کو شامل کرنے سے کوئی پیچیدگی پیدا نہیں ہوتی۔ ایسا کرنا فلسطینیوں کی ترقی کےتناظرمیں آتا ہے اور یہ وزارت تعلیم اور اردنی ریاست کی سوچ سے مطابقت رکھتا ہے۔

بدران نے پریس بیانات میں وضاحت کی کہ نصاب کا نیا ورژن موجودہ تعلیمی سال کے دوسرے سمسٹر کے دوران دسویں جماعت کے طلباء میں تقسیم کیا جائے گا۔

ریستوران، گروسری اور کافی شاپ

اردن کے نصاب میں سات اکتوبر کے حوالے سے تنازعہ پہلی بار سامنے نہیں آیا۔ اس سے قبل "7 اکتوبر" کے حوالے سے اس سے قبل ریستوران کے نام کی نشانی نے بھی ایسی ہی صورتحال پیدا کی جس کے بعد اس کے مالکان کو نام بدلنا پڑا تھا۔ دارالحکومت عمان میں ایک گروسری اسٹور اور سڑک پر ایک کافی شاپ پر بھی سات اکتوبر کا نام درج کیا گیا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں