غزہ میں ہالینڈ نے امدادی فوجی طیارہ بھیج دیا،اردن کی مدد سے امدادی سامان گرایا جائےگا

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

ہالینڈ نے اپنے ایک فوجی ٹرانسپورٹ طیارے کو غزہ میں فضا سے امدادی سامان پہنچانے کے لیے خطے میں بھیج دیا ہے۔ فضا سے زیر محاصرہ لوگوں کو امداد اردن کی مدد سے پہنچائی جائے گی۔ اس سے پہلے اردن کے علاوہ برطانیہ ، امریکہ اور فرانس بھی ایک ایک بار ایسا کر چکے ہیں۔

امریکہ کے کارگو طیارے نے 36000 افراد کے لیے کھانا نیچے گرایا تھا۔ واضح رہے غزہ مین اسرائیلی جنگ چھٹے ماہ میں داخل ہو چکی ہے۔ اب تک 30717 فلسطینی ہلاک اور 23 لاکھ بے گھر ہو چکے ہیں۔ جبکہ اسرائیل نے اس تباہ کر دی گئی غزہ کی پٹی کو اسرائیلی فوج نے مسلسل زیر محاصرہ رکھا ہوا ہے۔ زمینی امداد کی ترسیل میں اس طرح اسرائیل نے رکاوٹ پیدا کر رکھی ہے۔

اس سلسلے میں اقوام متحدہ نے غزہ میں قحط پھیلنے کا انتباہ کیا ہے۔ نیز عالمی ادارہ صحت نے کہا کہ دوہسپتالوں کے لیے ایک حالیہ امدادی مشن نے غزہ کے شمال میں بھوک سے مرنے والے بچوں کے خوفناک مناظر اپنی آنکھوں سے دیکھے ہیں۔

اب تک اٹھارہ کی تعداد میں ننھے بچے بھوک کی وجہ سے جاں بحق ہو چکے ہیں۔ گزشتہ روز ایک سولہ سالہ فلسطینی بچی کی بھوک سے ہلاکت کی اطلاع آئی ہے۔ شمالی غزہ میں اسرائیل نے امدادی سامان کی ترسیل 23 جنوری سے مکمل روک رکھی ہے۔

واضح رہے اسرائیلی محاصرے کی وجہ سے بین الاقوامی ادارے بھی امدادی کارروائیاں کرنا تقریباً ناممکن ہو چکا ہے۔ نتیجہ یہ ہے کہ غزہ میں بھوک اور پیاس سے لوگوں کے بڑی تعداد میں ہلاکتوں کا خطرہ ہے۔ تاہم اسرائیل کو کوئی بڑا ملک یا عالمی ادارے اس بے رحمی سے روکنے کو کسی طاقت یا اختیار کے ذریعے تیار نہیں ہے۔

اب بعض ملکوں نے فضا سے امداد گرانے کی حکمت عملی اختیار کرنے کا عندیہ دیا ہے لیکن غزہ میں خوراک کی جتنی ضرورت ہے جہازوں سے پوری نہیں ہو سکتی ہے کہ اقوام متحدہ کے متعلق ادارے ان کوششوں کو انتہائی ناکافی قرار دے چکے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں