اسرائیل کو استعفوں کی نہیں حماس اورحزب اللہ سے لڑنےکےلیے اتحاد کی ضرورت ہے:نیتن یاہو

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

اسرائیلی وزیر اعظم بنجمن نیتن یاہو نے کہا ہے کہ انہیں حماس اور حزب اللہ کے خطرے کو دور کرنے کے لیے سیاسی مفادات سےبالا تر ہو کراپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس بات کو یقینی بنانا ہے کہ ہر کوئی حکومت میں رہے اور دوسرےبھی اس میں شامل ہوں۔

ان کا یہ بیان ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب جنگی کونسل کے رکن بینی گانٹز نے آج کونسل سے استعفے کا اعلان کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

نیتن یاہو نے آج شام حکومتی اجلاس کے دوران گانٹز کے "استعفیٰ" کی خبروں کا حوالہ دیتے ہوئے ان کے اور استعفیٰ کو "معمولی مفادات کے لیے سیاسی فیصلہ " قرار دیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ "جنگ کے درمیان گانٹز حکومت سے استعفیٰ دینا چاہتا ہے!"

اسرائیلی وزیر اعظم نے کہا کہ ’یہ وقت استعفوں کا نہیں بلکہ اپنی صفوں میں اتحاد پیدا کرنے کا ہے۔ ہمیں اپنے سیاسی مفادات سے بالا تر ہو کرحزب اللہ اور حماس کے خطرے کے خلاف متحد ہونا چاہیے‘‘۔

انہوں نے اسرائیلی حکومت کے اجلاس کے دوران کہا کہ"میں حکومت میں شامل گان اور آئزن کوٹ کی حمایت کرتا ہوں۔ دوسرے بھی اس میں شامل ہوں گے"

بینی گانٹزکے استعفے کا معاملہ

اسرائیل کی تین رکنی جنگی کونسل کے رکن بینی گانٹز کی جانب سے گذشتہ ماہ دھمکی دی گئی تھی کہ اگر غزہ میں جنگ کا نیا منصوبہ 8 جون تک نہ اپنایا گیا تو وہ بنجمن نیتن یاہو کی سربراہی میں حکومت سے مستعفی ہو جائیں گے۔ اسی حوالے سے اسرائیلی میڈیا نے انکشاف کیا ہے کہ گانٹز آج اتوار کی شام تک وار کونسل سے استعفیٰ دینے کا اعلان کریں گے۔

اسرائیلی براڈکاسٹنگ کارپوریشن نے کہا کہ وزیرکے عہدے پر فائز بینی گانٹز آج شام وار کونسل سے اپنے استعفیٰ کا اعلان کرنے کا ارادہ رکھتے ہیں۔

یہ پیش رفت اس وقت سامنے آئی ہے جب گانٹز نے کل ہفتہ کو نصیرات کیمپ سے چار زیر حراست افراد کو بازیاب کرانے کے آپریشن کی وجہ سے اپنا استعفیٰ ملتوی کر دیا تھا، لیکن بعد میں انہوں نے اعلان کیا کہ وہ آج شام یروشلم کے معیاری وقت کے مطابق آٹھ بجے میڈیا کے سامنے اپنا بیان دیں گے جس میں وہ استعفے کا اعلان کریں گے۔

اسرائیلی نشریاتی ادارے نے اس سے قبل نیتن یاہو کے قریبی لوگوں کے حوالے سے کہا تھا کہ وزیر اعظم نے ہنگامی حکومت کو تحلیل کرنے سے روکنے کی کسی بھی طرح سے کوشش نہیں کی"۔حالانکہ انہوں نے متعدد مرتبہ بینی گانٹز سے استعفے نہ دینے پر زور دے چکےہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں