.

بوکو حرام کے ساتھ ڈیل، نائجیریا حکومت کا دعویٰ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

نائجیریا کی فوج نے اعلان کیا ہے کہ اُس کی بوکو حرام کے ساتھ فائر بندی کی ڈیل طے پا گئی ہے۔ اعلان کے مطابق باغیوں کے ساتھ فائر بندی کی ڈیل میں نائجیریا اور کیمرون کے فوجی حکام شریک تھے۔ ڈیل ابُوجہ میں طے پائی ہے۔

نائجیریا کے حکام کے مطابق بوکو حرام کے باغیوں کے ساتھ طے پانے والی جنگ بندی کی ڈیل میں اغوا شدہ دو سو سے زائد اسکول گرلز کی رہائی بھی طے پا گئی تھی۔ ڈیل پر مبصرین نے شکوک و شبہات کا اظہار کرنا شروع کر دیا ہے۔

چیف آف ڈیفنس اسٹاف نائجیریا ایئر مارشل ایلکس بادیہ نے ڈیل کی مناسبت سے بتایا اور یہ بھی کہا کہ فوج کی تمام سروسز کے سربراہان کو ہدایت کر دی گئی ہے کہ وہ تازہ پیش رفت کے تناظر میں ڈیل پر عمل پیرا ہونے کی عملی کوششیں کریں۔

صدر گُڈ لَک جوناتھن کے سینیئر مشیر حسن ٹُکُر نے بھی ڈیل کی تصدیق کرتے ہوئے کہا کہ مسلح حالات کے خاتمے کے لیے سمجھوتہ کیا گیا ہے اور اب رواں برس اپریل میں اغوا کی گئی اسکول گرلز کی رہائی کے امکانات بھی پیدا ہو گئے ہیں۔

تجزیہ کاروں کا خیال ہے کہ ماضی میں نائجیرین حکومت اور فوج کی جانب سے بوکو حرام کے ساتھ معاملات حل کرنے کی خبریں سامنے آتی رہی ہیں لیکن اُن کے مثبت پہلو سامنے نہیں آئے تھے اور نئی ڈیل پر عمل پیرا ہونے تک کچھ بھی نہیں کہا جا سکتا۔ بعض مبصرین کے خیال میں اگلے ہفتوں میں گُڈ لَک جوناتھن دوسری مُدت صدارت کے لیے امیدوار بننے کی خواہش رکھتے ہیں اور یہ حکومتی اعلان اُس وقت تک اعلان ہی رہے گا جب تک اِس پر مثبت انداز میں عمل شروع نہیں ہوتا۔

شیہُو سانی نے حکومت کے نمائندے کے طور پر بوکو حرام کے ساتھ مذاکرات میں حصہ لیا تھا۔ اُن کا کہنا ہے کہ صدر کے مشیر حسن ٹُکُر کا وہ دعویٰ کہ وہ بوکو حرام کے دانالدی احمُدو نے اس شدت پسند گروہ کی جانب سے مذاکرات میں شرکت کی تھی، دُرست نہیں ہے۔ سانی کے مطابق انہوں نے بات چیت کے ادوار میں ایسے کسی شخص کا نام نہیں سنا۔

نائجیریا کے نیشنل سکیورٹی ایڈوائزر کی معاونت کرنے والے رالف بیلو فادیلی کا کہنا ہے کہ کئی افراد فراڈ کے ساتھ بھی بوکو حرام کے لیڈر ابوبکر شیکاؤ کی نمائندگی کے دعوے کرتے چلے آ رہے ہیں۔ رالف بیلو نے برطانوی تھنک ٹینک چیتھم ہاؤس کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ حکومت مذاکرات کے لیے تیار ہے لیکن بوکو حرام کی جانب سے کوئی مثبت ردِ عمل سامنے نہیں آ یا ہے۔

بوکو حرام کے ساتھ ڈیل پر ابوجہ حکومت کے سکیورٹی معاملات کے ترجمان مائک اومیری کا کہنا ہے کہ اسکول گرلز کی رہائی کے معاملے پر کوئی سمجھوتہ طے نہیں پایا ہے۔ ایک بین الاقوامی غیر سرکاری تنظیم ایکشن ایڈ کے کنٹری ڈائریکٹر برائے نائجیریا حسینی عبدُو کا کہنا ہے کہ جنگ بندی کی جانب بات چیت کا عمل ابھی جاری ہے اور اُس تک ابھی حکومتی اور انتہا پسند پہنچے نہیں ہیں۔

اُدھر امریکی حکومت کا بھی کہنا ہے کہ وہ بھی ڈیل طے پانے کی تصدیق نہیں کر سکتی۔ وزارتِ خارجہ کی ترجمان میری ہارف کا کہنا ہے کہ اگر ڈیل طے پائے گی تو واشنگٹن حکومت اِس کا خیر مقدم کرے گی۔