.

لیبی فوج کا قومی وفاق حکومت کے سربراہ سمیت دسیوں افراد کی گرفتاری کا حکم

وزیراعظم فائز السراج پر ریاست کے خلاف جرائم کے الزامات

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

لیبیا کی فوج کی اعلیٰ کمان نے قومی وفاق حکومت کے سربراہ سپریم ریاستی کونسل کے چیئرمین فائز السراج، ان کی حکومت کے ارکان اور مغربی زون کی فوجی قیادت کو ریاست کے خلاف سنگین جرائم کے ارتکاب کے الزامات میں فوری گرفتار کرنے کا حکم دیا ہے۔

العربیہ ڈاٹ نیٹ کے مطابق لیبی فوج کا کہنا ہے کہ ملٹری پراسیکیوٹر نے وزیراعظم فائز السراج اور ان کی ٹیم میں شامل دیگر عہدیداروں کے خلاف سخت قانونی کارروائی کے لیے ان کی گرفتاری کے احکامات دیئے ہیں۔

ملٹری پراسیکیوٹر کی طرف سے اسٹیٹ کونسل کے سابق چیئرمین عبدالرحمان السویحلی،قومی حکومت کے سابق سربراہ خلیفہ الغویل، سابق مفتی اعظم الصادق الغریانی، میجر جنرل سلیمان محمود، میجر جنرل یوسف المنقوش، بریگیڈیئر جنرل اسامہ جویلی، سابق وزیر دفاع کرنل مہدی البرغثی، کرنل مفتاح عمر، کربل عبدالباسط الشاعری، کرنل ادریس بوقویاطین، کرنل طارق الغرابلی، قومی وفاق حکومت کے ترجمان کرنل محمد قنونو، کرنل ابراہیم ھدیہ، دہشت گرد ملیشیا کے سربراہ الصمود صلاح بادی، کیپٹن محمد الحجازی، عادل عبدالکافی الزعیری اور دہشت گرد مصطفیٰ الشرکسی کی گرفتاری کے احکامات دیے گئے ہیں۔

ملٹری پراسیکیوٹر کا کہنا ہے کہ مذکورہ تمام عناصر قومی وحدت کو نقصان پہنچانے، ریاست کےساتھ خیانت کرنے اور دوسرے ممالک کہ شہ سے لیبیا میں جنگ کی آگ بھڑکانے، ملک میں مسلح‌ ملیشیائیں تشکیل دینے، دہشت گردوں کی مالی مدد کرنے اور انہیں تحفظ دینے اور قومی وفاق حکومت کی آڑ میں لیبیا کو دوسرے ممالک کا آلہ کار بنانے جیسے جرائم میں ملوث پائے گئے ہیں۔

ادھر لیبیا میں محاذ جنگ سےملنے والی اطلاعات کے مطابق دارالحکومت طرابلس میں لیبی فوج اور حکومت کے حامیوں کے درمیان گھمسان کی جنگ جاری ہے. فوج نے دارالحکومت کے جنوب مغرب کی سمت سے پیش قدمی کا دعویٰ کیا ہے.