سنگا پورائیر نے حاملہ خواتین کی ملازمت ختم کرنے والا امتیازی قانون تبدیل کر دیا

ابھی بعض شکوک اور مبہم چیزیں موجود ہیں، کورینا ویمن ایسوسی ایشن فار ایکشن اینڈ ریسرچ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

سنگا پور ائیر لائنز نے اپنے کیبن کریو میں شامل حاملہ خواتین سے متعلق قوانین میں ترمیم کر دی ہے۔ طویل عرصے سے اس قانون کو سخت تنقید کا نشانہ بنایا جارہا تھا۔ پہلے قانون کے تحت کیبن کریو میں شامل خواتین کو حاملہ ہونے کی صورت میں ملازمت سے ہاتھ دھونا پڑتے تھے۔ سنگا پور ائیر کے ایک ذمہ دار نے ترمیم شدہ قانون کے بارے میں بتایا ہے کہ ' کیبن کریو میں شامل خواتین جو حاملہ ہوں وہ گرا ونڈ ڈیوٹی کا انتخاب کر سکتی ہیں اور ڈلیوری کے بعد واپس ملازمت پر آسکتی ہیں۔ '

قبل ازیں کے قواعد کے مطابق جن ھاملہ خواتین نے کمپنی کو بتایا کہ وہ حاملہ ہیں انہیں بغیر تنخواہ کے رخصت پر بھیج دیا گیا اور زچگی کے مراحل سے واپسی پر انہں نوکری سے ہی برخاست کر دیا گیا۔

کیونکہ سنگا پور ائیر میں اس نئی ترمیم سے پہلے ھاملہ ہو جانے والی خواتین کے لیے کوئی گراوند ڈیوٹی موجود نہ تھی۔ ایسی خواتین کو کمپنی کی نوکری سے ہاتھ دھونا پڑتے تھے اور بعد ازاں نئی ملازمت کے لیے از سر نو درخواست دینا ہوتی تھی۔ سنگا پور ائیر نے تقریبا ایک دہائی کی تنقید کے بعد اس قانون میں ترمیم کی ہے۔

یہ امتیازی قانون 2010 سے جاری تھا۔ کووڈ 19 کے آنے کے بعد چونکہ ایوی ایشن سروسز کو کافی نقصان سے گذرنا پڑا تھا۔ لیکن بعد ازاں اس صنعت کو کارکنوں کی دستیابی میں کمی کا سامنا کرنا پڑا اس لیے اس نے اپنے قواعد میں نرمی قبول کر لی۔

ملازمت چھوڑنا:

سنگا پور ائیر نے اپنے جاری کردہ ایک بیان میں کہا' سابقہ پالیسی کے تحت کارکن کے حامل ہونے کی صورت ملازمت چھوڑنا پڑتی تھی۔ لیکن ان کے لیے زمین پر کام کی ملازمت پیدا کر لی گئی ہے۔ ہم اپنے محنتی اور اہلیت رکھنے والے کارکنوں کے لیے زیادہ محنت کریں گے۔ تاہم ابھی ملازمت کے سلسلے میں شرائط میں کچھ ابہام پایا جاتا ہے۔'

ویمن ایسوسی ایشن فار ایکشن اینڈ ریسرچ کی ایگزیکٹو دائریکٹر کورینا لم کے حوالے سے ایک رپورٹ میں بتایا گیا ہے ابھی بھی کئی مشکوک اور مبہم چیزیں موجود ہیں۔ جنہیں سنگا پور ائیر نے نہیں دیکھا ہے۔'

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں