.

اسرائیل القدس کی ہیئت تبدیل کر رہا ہے: محمود عباس

فلسطینی صدر کا پوپ فرانسیس کے استقبال کے بعد خطاب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

فلسطینی اتنظامیہ کے صدر محمود عباس نے اسرائیل پر الزام عاید کیا ہے وہ مسلمانوں اور عیسائیوں کو القدس شہر سے بیدخل کر رہا ہے۔

اتوار کے روز حضرت عیسی علیہ السلام کی جائے پیدائش بیت لحم میں پاپائے روم کے استقبال کے بعد نیوز کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے محمود عباس نے کہا کہ ہم نے عزت ماب پوپ کو القدس شہر کے دگرگوں حالات کے بارے میں بریف کیا ہے۔ ہم نے پوپ فرانسیس کو ان اسرائیلی اقدامات کے بارے میں آگاہ کیا کہ جو صہیونی ریاست اس مقدس شہر کی ہیئت کو تبدیل کرنے کے سلسلے میں آئے روز اٹھا رہا ہے، ہم نے انہیں بتایا کہ اسرائیل ایسے اقدامات کے ذریعے شہر سے عیسائیوں اور مسلمانوں کو بیدخل کرنا چاہتا ہے۔

پوپ فرانسیس اپنے دورہ مشرق وسطی کے سلسلے میں دوسرے روز اتوار کو مقبوضہ مغربی کنارے پہچنے۔ عیسائیوں کے اہم ترین مذہبی پیشوا اردن کے فوجی ہیلی کاپٹر کے ذریعے بیت لحم پہنچے جہاں فلسطینی صدر محمود عباس اور فلسطینی انتظامیہ کے دیگر عہدیداروں نے ان کا استقبال کیا۔

اس کے بعد پوپ فرانسیس کے اعزاز میں چرچ آف نیٹویٹی میں استقبالیہ تقریب ہو گی۔ پوپ فرانسیس مقبوضہ غرب اردن سے براہ راست فضائی سفر کر کے چرچ پہچیں گے، اس طرح وہ عیسائیوں کے پہلے مذہبی پیشوا ہوں گے کہ جنہوں نے علاقے کا دورہ اسرائیل کی علاقے سے شروع کرنے کے بجائے فلسطینیوں شہروں سے کیا، جو بالواسطہ طور پر پاپائے روم کی جانب سے فلسطینیوں کی اپنی ریاست قائم کرنے کی کوششوں کی توثیق قرار دی جا رہی ہے۔

پاپائے روم کا دورہ امریکی حمایت میں ہونے والے امن مذاکرات کی ناکامی کے بعد ہو رہا ہے جس میں فریقین نے ایک دوسرے پر مذاکرات ناکام کرنے کرنے الزامات عاید کیے۔ یاد رہے کہ ویٹکن، اسرائیل کے پہلو میں آزاد فلسطینی ریاست کے قیام کا خواہشمند ہے۔ پوپ فرانسیس نے ہفتے کے روز اردن میں مختلف پروگراموں سے خطاب میں مسلئہ فلسطین کے عادلانہ حل پر زور دیا۔

انہوں نے تمام فریقوں پر شام میں جاری لڑائی کے خاتمے پر بھی زور دیا ہے۔ انہوں نے اسلحہ سازوں پر زور دیا کہ وہ امن کے بیٹے بنیں۔

ادھر اسرائیلی پولیس نے بتایا ہے کہ پوپ فرانسیس کے دورہ اسرائیل کی مخالفت میں احتجاجی مظاہرہ کرنے والے 26 انتہا پسند یہودیوں کو گرفتار کیا ہے۔ ان کا تعلق دائیں بازو سے تعلق رکھنے شدت پسند یہودیوں سے ہے۔ انہوں نے کل اس مقام پر احتجاج کیا جہاں پیر کے روز پوپ فرانسیس شب بسری کریں گے۔ بعض یہودیوں کا خیال ہے کہ حضرت داٶد علیہ السلام کی قبر اسی عمارت کے نیچے موجود ہے جہاں پوپ فرانسیس کا قیام ہو گا۔