ریاض ایئر کی پائیداری کے اہداف کو آگے بڑھانے کے لیے یو این جی سی میں شمولیت

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
4 منٹس read

سعودی عرب کی نئی عالمی معیار کی ایئر لائن ریاض ایئر اقوام متحدہ کے گلوبل کمپیکٹ میں شامل ہو گئی ہے جو دنیا کا سب سے بڑا کاروباری پائیدار اقدام ہے اور ذمہ دار کاروباری طریقوں اور پائیدار ترقی کے اہداف کو آگے بڑھاتا ہے۔

اقوامِ متحدہ کے سیکرٹری جنرل آنتونیو گوتریس کو لکھے گئے خط میں ریاض ایئر کے سی ای او ٹونی ڈگلس نے سرکاری طور پر ریاض ایئر کی طرف سے اقوامِ متحدہ کے عالمی معاہدے کے دس اصولوں پر عمل درآمد کرنے کا عہد کیا۔ یو این جی سی کے فعال شرکاء کے طور پر ریاض ایئر انسانی حقوق، محنت، ماحولیات، اور انسدادِ بدعنوانی جیسے شعبوں میں پائیدار اور معاشرتی طور پر ذمہ دارانہ پالیسیاں اپنائے گا اور ان کوششوں پر ہونے والی پیش رفت کے بارے میں باقاعدگی سے رپورٹ کرے گا۔

ریاض ایئر 2025 کے وسط میں اپنی اولین پرواز سے قبل اپنی پہلی پائیداری رپورٹ بھی شائع کرے گا۔

ریاض ایئر کے سی ای او ٹونی ڈگلس نے کہا: "ریاض ایئر میں ہم اپنے ماحولیاتی اثرات سے آگاہ ہیں اور مملکت کے پائیداری کے اہداف میں فعال طور پر تعاون کرنے، عالمی معیار کے طریقوں کو اپنانے اور اپنے کاروبار کے ہر شعبے میں ای ایس جی کو ضم کرنے میں اپنی صنعت کی قیادت کرنے کے لیے پرعزم ہیں۔"

ڈگلس نے مزید کہا، "ہمارے جدید بوئنگ 787-9 ڈریم لائنر طیارے اور جین ایکس ون بی انجن کو ان کے بہتر ماحولیاتی اثرات کے تحفظات کے لیے بڑے پیمانے پر تسلیم کیاجاتا ہے اور زیادہ وسیع پیمانے پر ای ایس جی حکمتِ عملی ریاض ایئر کے کام کرنے کے ہر پہلو کے سامنے اور مرکز میں ہے۔ ہم عہد کرتے ہیں کہ کوئی شارٹ کٹ نہیں لیں گے اور فلائٹ اور گراؤنڈ آپریشنز سے لے کر دفتری طریقوں، آمد و رفت تک حتیٰ کہ ریاض ایئر کے گھر بیٹھے ملازمین تک پائیداری پوری ایئر لائن میں چلائی جائے گی۔ ایک سٹارٹ اپ ایئر لائن کے طور پر یہ روزِ اول سے صحیح طریقے سے صحیح کام کرنے کا ایک سنہری موقع ہے۔"

جولائی 2000 میں شروع کردہ یہ اقوامِ متحدہ کا ایک رضاکارانہ معاہدہ ہے جو دنیا بھر کی کمپنیوں کو ذمہ دار اور پائیدار کاروباری حکمتِ عملی اور طریقے تیار، نافذ اور ظاہر کرنے کی ترغیب دینے کے لیے ڈیزائن کیا گیا ہے۔ یو این جی سی کے ذریعے ریاض ایئر کو پائیداری کے تمام شعبوں میں اپنی ٹیم کے لیے سیکھنے، تربیت اور ترقی کو بڑھانے کے لیے وسیع پیمانے پر ذرائع اور وسائل تک رسائی سے بھی فائدہ ہوگا۔

یو این جی سی کے ایگزیکٹو ڈائریکٹر ابراہیم الہلالی نے کہا: "ہمیں یہ اعلان کرتے ہوئے خوشی ہو رہی ہے کہ ریاض ایئر نے سعودی عرب میں اقوامِ متحدہ کے عالمی کمپیکٹ نیٹ ورک میں شمولیت اختیار کر لی ہے۔ ہوا بازی کی پائیداری کے لیے ان کی وابستگی کام شروع کرنے سے ایک سال قبل نیٹ ورک میں شامل ہونے کے ان کے فیصلے سے ظاہر ہے جو ذمہ دارانہ کاروباری طریقوں کے لیے ان کی لگن کا اظہار کرتی ہے۔

2025 میں آسمان پر پرواز کے لیے تیار ریاض ایئر کا مقصد دنیا کا ترقی یافتہ ترین سوچ کا حامل کیریئر بننا ہے جو پائیداری کے بہترین طریقوں کو اپنائے، ہوائی سفر کو بلند کرے اور اعتماد، آرام اور مہمان نوازی کا ایک نیا معیار قائم کرے۔ ایک مکمل سروس اور ڈیجیٹل طور پر مقامی کیریئر کی حیثیت سے ریاض ایئر مہمانوں کو مستند اور گرم جوش سعودی مہمان نوازی کی پیشکش کرتے ہوئے نئی ٹیکنالوجیز اور اختراعات کا آغاز کرے گا۔

قومی نقل و حمل اور لاجسٹکس حکمتِ عملی کے لیے ایک عمل انگیز کے طور پر ایئر لائن ویژن 2030 کے اہداف کو حقیقت بنانے کی جانب قدم اٹھاتے ہوئے سعودی عرب کے وسیع تر اقتصادی تنوع اور روزگار کے مواقع پیدا کرنے میں اہم کردار ادا کرنے کے لیے تیار ہے۔ ریاض ایئر 100 سے زیادہ مقامات پر پرواز کرنے کے لیے تیار ہے جس سے مملکت کی غیر تیل کی نمو میں 20 بلین ڈالر کا اضافہ ہوگا اور عالمی اور مقامی طور پر 200,000 سے زیادہ ملازمتیں پیدا ہوں گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں