دوسرے آئی ایم ایف جائزے کیلئے شرط؛ پاکستان سے پراپرٹی، زرعی شعبے پر ٹیکس کا پلان طلب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
1 منٹ read

آئی ایم ایف نے پاکستان کیلئے 3ارب ڈالر قرض کی منظوری کے ساتھ ہی دوسرے جائزے کے لیے شرائط پیش کر دیں اور ریئل اسٹیٹ اور زرعی شعبے پر ٹیکس عائد کرنے کا پلان مانگ لیا۔

آئی ایم ایف کا کہنا ہے کہ پاکستان کے پاس پراپرٹی اور زرعی شعبے سے محصولات بڑھانے کی صلاحیت موجود ہے۔

ذرائع کے مطابق آئی ایم ایف نے کہا ہے کہ پراپرٹی اور زرعی شعبے پر ٹیکس عائد کر کے محصولات میں اضافہ کیا جائے۔

ذرائع کا کہنا ہے ایف بی آر کا پلان آئی ایم ایف نے منظور کر لیا تو منی بجٹ آسکتا ہے تاہم پراپرٹی سیکٹر اور زرعی شعبے پر ٹیکس عائد کرنے کا فیصلہ نئی حکومت کو کرنا ہوگا، ذرائع ایف بی آر کے مطابق پراپرٹی اور زرعی شعبے پر ٹیکس عائد کرنے کے لیے عالمی بینک سے معاونت لی جائے گی۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں