پِکاسو کا چوری شدہ بیش قیمت فن پارہ عراق کے منشیات فروش گینگ سے برآمد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

عراق میں گرفتارمنشیات کے گروہ سے ایک چوری شدہ پینٹنگ ضبط کی گئی ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہ وہ عالمی شہرت یافتہ مصور پابلو پِکاسو کی ہے۔

عراق کے سرکاری خبررساں ادارے (آئی این اے) کی رپورٹ کے مطابق ہفتے کے روز اس گینگ کو گرفتار کیا گیا تھا۔اس سے برآمد ہونے والے فن پارے کی مالیت لاکھوں ڈالربتائی جاتی ہے۔اس کو عراق کی وزارت داخلہ کے حکام کی چھاپا مارکارروائی کے دوران میں ضبط کیا گیا تھا۔

مبیّنہ طور پر منشیات کے لین دین اوراسمگلنگ کے الزم میں عراق کے مرکزی علاقے دلیہ میں تین افراد کوحراست میں لیا گیا تھا۔پکاسو کے مفروضہ فن پارے کے بارے میں وزارت داخلہ نے مزید تفصیل جاری نہیں کی لیکن یہ پہلا موقع نہیں جب عراقی حکام نے پکاسو کی مبینہ پینٹنگ ضبط کی ہے۔

فرانسیسی خبررساں ایجنسی اے ایف پی کی رپورٹ کے مطابق 2009 میں پولیس نے بغداد کے جنوب میں ایک شخص کو گرفتارکیا تھا۔ وہ پکاسو کا بنا ایک فن پارہ 450,000 ڈالرمیں فروخت کرنے کی کوشش کر رہا تھا۔

یہ پینٹنگ 1990 میں صدام حسین کی فوج کے حملے کے دوران میں کویت کے قومی عجائب گھر سے چرائی تھی۔تاہم بعد ازاں پیرس کے لوفرے اور کویت کے قومی عجائب گھرکے عہدے داروں نے اس دعوے کو مسترد کرتے ہوئے کہا تھا کہ یہ پینٹنگ جعلی ہے۔

ان کا کہنا تھا کہ نیشنل میوزیم میں عراق کے حملے سے پہلے کبھی پکاسو کا کوئی فن پارہ نہیں رکھا تھا اور یہ دعویٰ بھی دھوکا دہی پرمبنی تھا کہ لوفرے نے یہ پینٹنگ کویت کے قومی عجائب گھرکو فروخت کردی تھی۔

عراق کے محکمہ انسدادِمنشیات کے ترجمان کرنل بلال صبحی نے آئی این اے کوبتایا کہ ہفتے کے روز پینٹنگ کی ضبطی کااعلان عراق میں منشیات فروشوں کے خلاف متعدد چھاپوں کے بعد کیا گیا ہے۔ان کے دوران میں عوام کے ارکان کی جانب سے خفیہ اطلاعات اور جاسوس کتوں کے ذریعے عوامی مقامات کا معائنہ کیا گیاتھا۔

صبحی نے بتایا کہ جولائی میں غیرقانونی منشیات کے لین دین، استعمال اور فروغ کے الزام میں مجموعی طور پر1300 افراد کو گرفتار کیا گیا تھا اور ان سے 83 کلوگرام غیرقانونی موادضبط کیا گیاتھا۔

انھوں نے مزید کہا کہ منشیات کی تجارت کا تعلق قتل، چوری، اغوا، عصمت دری،جرائم پیشہ گروہوں کی تشکیل، بدعنوانی اور خاندانی انتشار سمیت بہت سے جرائم سے ہے۔

واضح رہے کہ عراق اس وقت منشیات کی ایک پھلتی پھولتی تجارت کا مرکز بن چکاہے۔اس کی ایک وجہ ہیروئن پیدا کرنے والے دوبڑے پڑوسی ملک ایران اور شام کے درمیان واقع ہوناہے۔ یہ مشرقِ اوسط میں انتہائی قوت بخش دوا کیپٹاگون بنانے والا ملک بھی ہے۔اقوام متحدہ کے دفتربرائے منشیات وجرائم کے مطابق حالیہ برسوں میں عراق میں کرسٹل میتھ (میتھا ایمفاٹائن)کی پیداوارمیں بھی اضافہ ہوا ہے۔

مقبول خبریں اہم خبریں