.

براک اوباما کی مسلمانوں کو رمضان کی مبارک باد

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:

امریکی صدر براک اوباما نے دنیا بھر کے مسلمانوں کو مقدس ماہ صیام کے آغاز پر مبارک باد دی ہے اور اسے نماز اور روزے کے ذریعے اخلاص اور خود احتسابی کے حصول کا وقت قرار دیا ہے۔

انھوں نے اپنے تہنیتی پیغام میں کہا ہے کہ ''امریکی عوام کی طرف سے میں امریکا اور دنیا بھر میں مقیم مسلمانوں کے لیے نیک خواہشات کا اظہار کرنا چاہتا ہوں اور انھیں رمضان کریم کہتا ہوں''۔

انھوں نے کہا کہ رمضان اخلاص اور لِلٰہیت کے حصول کا ذریعہ ہے۔اس میں مسلمان دن کو روزہ رکھتے ہیں اور رات کو تراویح کی نماز ادا کرتے ہیں۔یہ رسوم ہمیں مشترکہ اصولوں کی یاددہانی کراتی ہیں اور ان سے ہمیں انصاف ،ترقی ،روا داری اور انسانی وقار کے فروغ کے لیے اسلام کے کردار کی بھی یاددہانی ہوتی ہے۔

اپنے ویڈیو پیغام میں امریکی صدر نے پاکستان ،اسرائیلی ،فلسطینی تنازعے اور عراق میں جاری بحران کے حوالے سے بھی گفتگو کی ہے۔

سعودی عرب اور دوسرے بہت سے مسلم ممالک میں اتوار 29 جون کو پہلا روزہ تھا اور پاکستان سمیت بعض ممالک میں سوموارسے رمضان کا آغاز ہوا ہے۔رمضان کے آغاز کا انحصار چاند کی رؤیت پر ہے۔اس ماہ کے دوران مسلمان سحری سے لے غروب آفتاب تک روزہ رکھتے ہیں۔اس دوران وہ کچھ نہیں کھاتے پیتے اور بعض حلال امور سے بھی اجتناب کرتے ہیں۔روزہ اسلام کے پانچ ارکان میں سے دوسرا رکن ہے۔