خرطوم میں قطری سفارت خانے پر حملہ اور توڑ پھوڑ قابل مذمت ہے: سعودی عرب

سعودی وزارت خارجہ کا سوڈانی فریقوں سے پرامن رہنے اور سیاسی راستے پر چلنے کا مطالبہ

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size

سعودی وزارت خارجہ نے سوڈانی دارالحکومت خرطوم میں ریاست قطر کے سفارت خانے پر حملہ اور توڑ پھوڑ کی مذمت کردی اور کسی بھی پر تشدد کارروائی کو مسترد کردیا۔ سعودی وزارت خارجہ نے سعودی عرب کی طرف سے سفارتی مشنز کے خلاف ہر قسم کے تشدد اور تخریب کاری کو مکمل طور پر مسترد کردیا۔ سعودی وزارت خارجہ نے تمام سوڈانی فریقوں سے مطالبہ کیا کہ وہ جدہ میں ہونے والے حالیہ مذاکرات کے نتائج کے مطابق پر سکون رہیں اور سوڈان میں اس سیاسی راستے پر گامزن ہو جائیں جس سے بحران کے منصفانہ اور جامع حل تک پہنچنے کی کوشش کی جائے۔

ہفتے کے روز سوڈانی وزارت خارجہ نے ریپڈ سپورٹ فورسز پر خرطوم میں قطری سفارت خانے پر حملہ کرنے کا الزام لگایا تھا۔ بیان میں کہا گیا کہ وزارت خارجہ 20 مئی کو خرطوم میں قطری سفارت خانے کے ہیڈ کوارٹر پر باغیوں کی ریپڈ سپورٹ فورسز کے حملے کی سخت ترین الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔ سفارت خانہ میں توڑ پھوڑ کی گئی، عمارت میں موجود فرنیچر کی بھی توڑ پھوڑ کی گئی، سفارت کاروں کے تقدس کو پامال کیا گیا۔ بین الاقوامی اصولوں اور قوانین کی مخالفت کی گئی اور سفارت خانہ میں موجود سامان، کمپیوٹر اور کاریں بھی چوری کر لی گئیں۔

بیان میں کہا گیا وزارت خارجہ باغی ملیشیا فورسز کے اس دہشت گردانہ اور مجرمانہ رویے کی پر زور الفاظ میں مذمت کرتی ہے۔

واضح رہے قطر نے اعلان کیا تھا کہ فسادی مسلح فورسز نے خرطوم میں اس کے سفارت خانے کی عمارت پر دھاوا بولا اور توڑ پھوڑ کی ہے۔ سفارت خانے کے عملے کو پہلے ہی نکال لیا گیا تھا اور سفارت کاروں یا سفارت خانے کے عملے میں سے کسی کو کوئی نقصان نہیں پہنچا ۔

سوڈان میں جنگ چھٹے ہفتے میں داخل ہوگئی ہے۔ خرطوم کے مضافات میں گزشتہ رات اور ہفتے کی صبح فضائی حملے کیے گئے۔

مقبول خبریں اہم خبریں