چین کی جانب سے کیوبا میں جاسوسی اڈے کے قیام کی خبریں غلط ہیں: وائٹ ہاؤس

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
3 منٹس read

وائٹ ہاؤس نے جمعرات کو ان خبروں کی تردید کی ہے کہ چین امریکی ساحل کے قریب کیوبا میں جاسوسی اڈہ قائم کرنے کا ارادہ رکھتا ہے۔

وائٹ ہاؤس میں قومی سلامتی کونسل کے ترجمان جان کربی نے ان رپورٹس کی صداقت کی تردید کرتے ہوئے ایم ایس این بی سی کو ایک بیان میں کہاکہ "میں نے وہ پریس رپورٹ دیکھی ہیں یہ درست نہیں ہے۔"

انہوں نے کہا کہ "میں آپ کو بتا سکتا ہوں کہ ہم دنیا بھر میں چین کے اثر و رسوخ کی سرگرمیوں کے بارے میں فکر مند ہیں ہم اسے بہت قریب سے دیکھ رہے ہیں۔"

دوسری طرف واشنگٹن میں چینی سفارت خانے کے ترجمان نے کہا ہےکہ "ہم اس کیس سے واقف نہیں ہیں اور اس کے نتیجے میں ہم اس وقت کوئی تبصرہ جاری نہیں کر سکتے۔"

خفیہ معاہدہ

قبل ازیں وزارت دفاع نے وال سٹریٹ جرنل کی رپورٹ پر تبصرہ کرنے سے انکار کر دیا تھا جس میں کہا گیا تھا کہ بیجنگ اور ہوانا نے کیریبین جزیرے پر ایک چینی سائبرجاسوسی کی سہولت قائم کرنے کے لیے ایک خفیہ معاہدہ کیا ہے جو پورے جنوب مشرقی امریکا میں مواصلات کی نگرانی کر سکتا ہے۔

اخبار نے نامعلوم امریکی حکام کے حوالے سے بتایا کہ چین کیوبا کو اس سہولت کی تعمیر کے لیے "کئی بلین ڈالر" ادا کرے گا۔

واشنگٹن اور بیجنگ کے درمیان کشیدگی

یہ پیش رفت تائیوان کی خودمختاری کے لیے واشنگٹن کی حمایت کے پس منظر میں واشنگٹن اور بیجنگ کے درمیان تعلقات میں تناؤ کے درمیان سامنے آئی ہے۔ چین کا کہنا ہے کہ وہ ضرورت پڑنے پر طاقت کے ذریعے تائیوان کے مسئلے کو بحال کرنے کے لیے پرعزم ہے۔

چینی صدر شی جن پنگ تمام براعظموں میں امریکی فوج کی وسیع پیمانے پر تعیناتی کے ساتھ رفتار کو برقرار رکھنے کے مقصد کے ساتھ دنیا بھر میں اپنے ملک کی سیکورٹی موجودگی کی توسیع کو تیز کرنے پر زور دے رہے ہیں۔

سب سے بڑا براہ راست خطرہ

کیوبا میں ایک اڈہ جو جنوبی فلوریڈا کے ساحل سے صرف 150 کلومیٹر کے فاصلے پر واقع ہے امریکی سرزمین کے لیے اب تک کا سب سے براہ راست خطرہ ہو گا۔

سوویت یونین کے پاس کیوبا میں امریکا کی نگرانی کے لیے سائبر جاسوسی کی سہولیات موجود تھیں لیکن 1962ء میں، جب ماسکو نے کیوبا پر جوہری میزائل اڈہ قائم کیا تو امریکا نے اس جزیرے پر ناکہ بندی کر دی، جس سے اس وقت کی دو سپر پاورز کے درمیان تصادم کا خطرہ پیدا ہو گیا۔

سوویت یونین نے کیوبا سے جوہری میزائل واپس لے لیے جب کہ واشنگٹن نے ترکیہ سے جوہری صلاحیت کے حامل میزائل واپس لے لیے کیونکہ سوویت یونین نے اسے اپنے لیے خطرہ قرار دیا تھا۔

کیوبا میں چین کا یہ اقدام ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب اس سال کے شروع میں امریکا کے اوپر ایک چینی غبارے کو دیکھا گیا تھا۔اسے ملک کے مغرب سے مشرق تک حساس فوجی تنصیبات پر پرواز کرے دیکھا گیا جسے بعد ازاں مشرقی ساحل پر ایک امریکی لڑاکا طیارے نے مار گرایا تھا۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں