چوہدری انوار الحق بلا مقابلہ وزیراعظم آزاد کشمیر منتخب

پہلی اشاعت: آخری اپ ڈیٹ:
مطالعہ موڈ چلائیں
100% Font Size
دو منٹ read

آزاد جموں وکشمیر کی قانون ساز اسمبلی میں ڈرامائی انداز میں اسپیکر چوہدری انوارالحق چوہدری آزاد کشمیر کے بلا مقابلہ وزیر اعظم منتخب ہو گئے۔ 52 رکنی ایوان میں انہیں 48 ووٹ ملے جس کے بعد انہوں نے آزاد کشمیر قانون ساز اسمبلی کی تاریخ کا سب بڑا مینڈیٹ حا صل کر لیا۔

اسپیکر انوارالحق کے انتخاب کے ساتھ ہی سابق وزیر اعظم تنویر الیاس کی نااہلی کے بعد شروع ہونے والا جمود بھی ٹوٹ گیا۔

قانون ساز اسمبلی میں نئے وزیر اعظم کے لیے ووٹنگ جمعرات کو 1:25 بجے ہوئی اور 31 اراکین نے چوہدری انوار الحق کو ووٹ دیا، جن میں پاکستان پیپلز پارٹی (پی پی پی) کے 12، پاکستان مسلم لیگ(ن) کے 7 اراکین شامل تھے اور ووٹ دینے والے دیگر اراکین حکمران پاکستان تحریک انصاف (پی ٹی آئی) سے تعلق رکھنے والے منحرف اراکین تھے۔

انوار الحق پی ٹی آئی کی اقتدار میں واپسی یقینی بنانے کے لیے اپنی جماعت کے ساتھ رہے جس کے خلاف متحدہ اپوزیشن صدر سلطان محمود کے زیر اثر پی ٹی آئی کے باغی گروپ کی مدد سے حکومت ہتھیانے کی کوشش کر رہے تھے۔

دوسری جانب سابق وزیر اعظم اور پی ٹی آئی کے علاقائی صدر سردار تنویر الیاس نے کہا کہ پارٹی نے کسی امیدوار کا نام نہیں دیا۔

ان کا کہنا تھا کہ ’آج مجھے انوارالحق کی سازش کا علم ہوا ہے، ایک طرف وہ پی ٹی آئی کی قیادت کو جماعت بچانے کا یقین دلا رہے تھے، دوسری طرف وہ اسٹیبلشمنٹ سے معاہدہ کر رہے ہیں۔

مقبول خبریں اہم خبریں

مقبول خبریں